پی آئی اے کی امریکہ سے پروازوںکی بندش کے ساتھ پاکستان فری میت بھجوانے کا سلسلہ بھی بند ہو جائیگا


 

اس سلسلے میں 10اکتوبر سے آدھی کمی واقع ہو گئی ہے کیونکہ منگل کو جے ایف کے ائیرپورٹ سے قومی ائیر لائیز کی منگل والی آخری پرواز لاہور کے لئے روانہ ہوئی ، اب صرف ہفتے والی فلائٹ آپریٹ کرےگی

گذشتہ دس سالوںسے حکومت پاکستان کی پالیسی کے تحت امریکہ سمیت بیرو ن ممالک میں انتقال کرنے والے پاکستانیوں کی میت قومی ائیر لائینز بلا امتیاز فری پاکستان لے کر جاتی تھی

نیویارک (محسن ظہیر سے ) پاکستان کی قومی ائیر لائیز پاکستان انٹر نیشنل ائیر لائینز (پی آئی اے ) کی پروازوں کی امریکہ آمدو رفت کے سلسلے میں پروازوں کی کمی اور ان پروازوں کی مکمل بندش کی صورت میں مسافروں کے پاس دیگر بہت سے آپشن ہوں گے کہ وہ امارات ، اتحاد یا قطر ائیر ویز میں سے کسی پر بھی پاکستان سفر کر سکیں گے تاہم پی آئی اے کی پروازوں کی بندش کی صورت میں سب سے زیادہ متاثر پاکستانی امریکن کمیونٹی کے وہ ارکان ہونگے کہ جن کا امریکہ میں انتقال ہو جاتا ہے اور انکے عزیز و اقارب ان کی میت پی آئی اے کے ذریعے فری پاکستان بھجواتے ہیں ۔


واضح رہے کہ سابق نگران وزیر اعظم چوہدری شاعت حسین کے دور میں پاکستان کی وفاقی حکومت نے پالیسی بنائی تھی کہ اگر کوئی اوورسیز پاکستانی کسی بیرون ملک میںانتقال کر جاتا ہے اور اس ملک سے پی آئی اے کی پرواز پاکستان آتی ہے تو قومی ائیر لائینز پاکستانی کی میت کو بلا معاوضہ کارگو میں لائے گی

امریکہ میں یہ سلسلہ گذشتہ ایک دہائی سے کامیابی سے جاری ہے ۔ اس عرصے میں امریکہ میں مقیم پاکستانی امریکن کمیونٹی کے جن ارکان کا انتقال ہوا اور ان کے عزیز و اقارب نے میت کو پاکستان بھجوانے کا فیصلہ کیا تو پی آئی اے ایسے سینکڑوں کیسوں میں میتوں کو بلا امتیاز فری پاکستان لے کر گئی یوں بیرو ن ممالک میں انتقا ل کرنے والے پاکستانیوں کو ان کے عزیز و اقارب ان کے آبائی وطن میں سپرد خاک کرنے میں کامیاب ہو سکے ۔

امریکہ سے پی آئی اے کے علاوہ کسی امریکن یا غیر ملکی ائیر لائینز سے میت بھجوانے میں بھاری معاوضہ ادا کرنا پڑتا ہے ۔ لہٰذا اگر امریکہ سے اس سال کے آخر تک پی آئی اے کی پرواز یں مکمل بند کر دی گئیں تو یہاں سے میتوں کی پاکستان فری منتقلی کا سلسلہ بند ہو جائیگا اور امریکہ میں مقیم ایسے پاکستانی کہ جو میت کو بذریعہ کارگو بھجوانے کا بھاری بھر کم معاوضہ افورڈ نہیں کر سکتے ، ان کے لئے مشکلات پیدا ہو جائیں گی۔

اکتوبر کے دوسرے ہفتے تک نیویارک سے پی آئی اے کی دو پروازیں منگل اور ہفتے کو امریکہ آتی تھیں اور اسی روز پاکستان روانہ ہوتی تھیں۔ منگل کو نیویارک سے (10اکتوبر2017کو) اس سال پی آئی اے کی آخری پرواز پاکستان کے لئے روانہ ہوئی اور ساتھ ہی یہ اعلان کیا گیا کہ اب 31دسمبر تک پی آئی اے کی صرف ایک فلائٹ ہفتے میں ایک دن ہفتے والے دنپاکستان سے نیویارک آیا کرے گی اور اسی روز یہاں سے واپس جایا کرے گی ۔ نیویارک میں پی آئی اے حکام کے مطابق مذکور ہ شیڈول انہیں 31دسمبر تک کا دیا گیا ہے ۔ نئے سال میں یہ سلسلہ جاری رہے گا یا نہیں یا ہفتے والی پرواز بھی بند کر دی جائے گی ، اس بارے کچھ نہیں کہا جا سکتا۔

امریکہ میںپی آئی اے کی منگل کی فلائٹ ختم کرنے کا میتوں کی پاکستان روانگی کے حوالے سے فوری اثر یہ ہوگا کہ اب اگر کسی نے یہاں سے پی آئی اے کے ذریعے کوئی میت پاکستان روانہ کرنا ہے تو پہلے دو تین انتظار کے بعد وہ منگل یا ہفتے کی پرواز سے میت روانہ کر سکتے تھے لیکن اب انہیں ہفتہ بھر انتظار کرنا پڑے گا اور خدانخواستہ اگر ایک ہفتے میں ایک یا دو سے زائد میتوں کے کیس آجاتے ہیں تو قومی ائیرلائینز کے لئے کارکو انتظامات کے حوالے سے مسائل پیدا ہونگے

پی آئی اے حکام کی جانب سے ابھی تک واضح الفاظ میں کچھ نہیں کہا گیا کہ آیا قومی ائیر لائینز امریکہ سیکٹر کو رواں سال کے آخر تک مکمل طور پربند کررہی ہے یا نہیں تاہم امریکہ میں مقیم کمیونٹی مسلسل زیر گردش افواہوں کہ اس سیکٹر کو دسمبر کے بعد بند کر دیا جائیگا ، کی وجہ سے پریشانی کا شکار ہے ۔

امریکہ سے پی آئی اے کے ذریعے سفر کرنے والے مسافروں کو سب سے بڑا فائدہ یہ بھی تھا کہ یہ واحد ائیر لائینز تھی کہ جس کے ذریعے انہیں نیویارک سے لاہور نان سٹاپ سفر کرنے کا موقع میسر تھا ۔اب یہ موقع رواں سال کے آخر تک صرف ہفتے میں ایک دن میسر ہوگا ، اس کے بعد کیا ہوگا، اس حوالے سے نیویارک میں مقیم پی آئی اے حکام کا کہنا ہے کہ انہیں بھی کچھ معلوم نہیں ۔
 

تاریخ اشاعت : 2017-10-11 00:00:00
مقبول ترین خبریں
امیگریشن خبریں
SiteLock