امریکی آئین مسلم امریکن کے یکساں حقوق کا ضامن اور محافظ ہے ؛ سینیٹر مینینڈیز

امریکی آئین مسلم امریکن کے یکساں حقوق کا ضامن اور محافظ ہے ؛ سینیٹر مینینڈیز
308ملین آبادی کے وطن امریکہ کی سینٹ میںایک سو سینیٹرز ہیں اور ان سو میں سے ایک سینیٹر (باب مینینڈیز)پاکستانی و مسلم امریکن کمیونٹی کے ساتھ موجود ہے ؛ سینیٹر باب مینینڈیز کی کمیونٹی کو یقین دہانی
امریکی ریاست نیوجرسی سے دوسری ٹرم کےلئے سینیٹر کا الیکشن لڑنے والے ڈیموکریٹک سینیٹر باب مینینڈیز کےلئے نیوجرسی کی پاکستانی امریکن کمیونٹی کا فنڈ ریزنگ ڈنر، اہم شخصیات و ارکان کی شرکت
فنڈ ریزنگ ڈنر میں سینیٹر مینینڈیز کو شرکاءنے اسلام مخالف فلم پر مسلم کمیونٹی کے جذبات سے آگاہ کیا اور پاک امریکہ تعلقات اور نیوجرسی سمیت امریکہ بھر میں کمیونٹی کے معاملات کی جانب توجہ دلائی
ڈاکٹر رفیق چوہدری ، امتیاز سید، راحت چٹھہ، ڈاکٹر ارشد چٹھہ ، حافظ ذوالفقار ، امام معاتذ شرف سمیت اہم شخصیات کا تقریب سے خطاب ، لیبیا میں ہلاک ہونے والے امریکی سفیر کے اہل خانہ سے اظہار یکجہتی


نیوجرسی (محسن ظہیر سے ) امریکی ریاست نیوجرسی سے تعلق رکھنے والے ڈیموکریٹک پارٹی کے سینیٹر باب مینینڈیز نے جرسی سٹی میں مسلم امریکن کمیونٹی کی جانب سے منعقدہ ایک تقریب سے خطاب کے دوران کہا کہ امریکہ 308ملین لوگوں کا وطن ہے اور ان 308ملین لوگوں میں سے امریکی سینٹ میں ہم کل ایک سو ارکان سینٹ ہیں۔یہ بات کہنے کے بعد سینیٹر مینینڈیز نے تقریب کے مسلم شرکاءکی طرف دیکھتے ہوئے اور اپنی جانب اپنی انگلی سے اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ امریکی سینٹ میںموجود کل ایک سو سینیٹرز میں سے ایک آپ کے ساتھ ہے اور اس وقت آپ کے پاس موجود ہے۔ انہوں نے مسلم امریکن کمیونٹیسے کہا کہ میں آپ کو یقین دلاتا ہوں کہ آپ کو میرا مکمل تعاون حاصل ہے اور میں آپ کو یقین دلاتا ہوں کہ آپ کو امریکی آئین او ر قانون کے تحت یکساں تحفظ اور حقوق حاصل ہیں ۔
سینیٹر باب مینینڈیز جو کہ چھ نومبر کو ہونے والے امریکی الیکشن میں دوسری ٹرم کے لئے سینیٹرز کا الیکشن لڑرہے ہیں ، کے لئے نیوجرسی کے جرسی سٹی میں پاکستانی امریکن کمیونٹی کی جانب سے فنڈ ریزنگ ڈنر کا اہتمام کیا گیا جس سے ڈاکٹر رفیق چوہدری ، امتیاز سید، راحت چٹھہ، ڈاکٹر ارشد چٹھہ ، حافظ ذوالفقار ، امام معاتذ شرف نے خطاب کیا اور سینیٹرز مینینڈیز کو اسلام مخالف فلم پر مسلم امریکن کے جذبات ، پاک امریکہ تعلقات اور امریکہ میں بالعموم اور نیوجرسی سٹیٹ میں بالخصوص پاکستانی و مسلم امریکن کمیونٹی سے متعلقہ اہم امور کے بارے میں آگاہ کیا۔
سینیٹر مینینڈیز نے شرکاءکو یاد دلایا کہ نیوجرسی سٹیٹ میں انہوں نے ہی نیوجرسی میں کسی بھی فرد کے کسی دوسرے فرد کے خلاف تعصب پر مبنی اقدام کے خلاف قانون بنایا ۔انہوں نے کہا کہ چند سال پہلے میرے پاس بعض لوگ آئے اور انہوں نے کہا کہ ہمیں رنگ و نسل اور عقیدے وغیرہ کی بنیا دپر نشانہ بنایا گیا اور کیا آپ ہماری مدد کر سکتے ہیں۔ ہم نے جب صورتحال کا جائزہ لیا تو معلوم ہوا کہ رنگ و نسل اور عقیدے کی بنیاد پر کسی کو اگر نشانہ بنایا جائے تو کوئی خاص قانون موجود نہیں ہے ۔ لہٰذا اگر کوئی تعصب کی بنیاد پر کسی کو جانی یا مالی نقصان پہنچاتا تھا تو کوئی قانون موجود نہیں تھا۔لہٰذا ہم نے اس معاملہ کا ایک عرصہ تک جائزہ لیا اور اس پر سالوں کام کیا اور نیوجرسی میں تعصب کی بنیاد پر کی جانیوالی کاروائیوں کے خلاف قانون بنایا۔اس قانون کے مطابق اگر آپ نیوجرسی میں کسی فرد کے خلاف اس کی رنگ ونسل اور عقیدے کی بنیاد پر کوئی اقدام کرتے ہیںتو آپ کو اس کی سخت سزا دی جائے گی ۔
سینیٹر مینینڈیز نے کہا کہ ہم شاید کسی کے دل میں اگر کوئی تعصب موجود ہے تو اسے تو شاید باہر نہیں نکال سکتے لیکن ایسے متعصب شخص کو ایک پیغام دے سکتے ہیں کہ اگر تم کوئی کاروائی کرتے ہو تو اسے برداشت نہیں کیا جائیگا۔
پاک امریکہ تعلقات کے بارے میں شرکاءبالخصوص پاکستانی امریکن کمیونٹی نیوجرسی کی ممتاز سیاسی و سماجی شخصیت امتیاز سید کی جانب سے اپنے خطاب میں اٹھائے جانیوالے حالات و واقعات پر بات کرتے ہوئے ڈیموکریٹک سینیٹر نے کہا کہ میں پاک امریکہ تعلقات کا زبردست حامی ہوں ۔یہ تعلقات دونوں ممالک کے لئے ضروری ہیں ۔میں نے پاکستان کے لئے اربوں ڈالرز کی امداد کی قانون سازی کو امریکی سینٹ میں سپورٹ کیا ہے ۔میں نے یہ بھی زور دیا کہ امریکہ کی جانب سے دی جانیوالی امداد کا ایک حصہ پاکستانی عوام کی ترقی کے لئے بھی خرچ کیا جائے اور میں پاک امریکہ تعلقات کے فروغ اور دونوں ممالک کے مشترکہ مقاصد کے حصول کو یقینی بنانے کے لئے اپنا کردار ادا کرتا رہونگا۔انہوں نے کہا کہ پاکستان کی خود مختاری کو اس کے اندر سے بھی چیلنجوں کا سامنا ہے اور اس کا مقابلہ قوم کو خود متحد ہوکر کرنا ہے ۔
سینیٹر مینینڈز کا کہنا تھا کہ میں مسلمانوں کی حضرت محمد ﷺ سے محبت اور عقیدت اور ان کے اس ایمان کہ وہ حضرت محمد ﷺ کو اپنے اہل خانہ سمیت کسی بھی شے سے زیادہ بڑھ کر محبت کرتے ہیں ، کو سمجھتا ہوں اور میں سمجھتا ہوں کہ اس عقیدت سے واضح ہوتا ہے کہ مسلمانوں کےلئے حضرت محمد ﷺ کا کیا مقام ہے ۔انہوں نے کہا کہ بلاشبہ اسلام آج کی دنیا کے عظیم مذاہب میں سے ایک عظیم مذہب ہے اور بلاشبہ حضرت محمد ﷺ کی ذات اس مذہب کا محور ہیں ۔لہٰذا ہم ایسے طریقے اور راستے تلاش کریں گے کہ جن سے ان لوگوں کو کہ جو کسی کے بھی مذہبی جذبات کو مجروح کرتے ہیں کو یہ پیغام دیں کہ ہم ان کے اقدامات کو مسترد کرتے ہیں اور یہ ہمارے لئے ناقابل قبول اقدامات ہیں ۔ہم مسلسل ایسے راستے تلاش کریں گے کہ جیسا کہ ہم نے نیوجرسی میں تعصب کی بنیاد پر اقدام کرنے والے افراد کے خلاف اقدام کیا۔
سینیٹر مینینڈز نے کہا کہ آج کی جس دنیا میں ہم رہ رہے ہیں کہ اس میں دنیا بھر میں کہیںبھی کوئی بھی شخص کمپیوٹر پر بیٹھ کر اپنی ایک انگلی دبا کر کوئی ایسا اقدام کرسکتا ہے کہ جو ہمارے لئے ایک چیلنج بن سکتا ہے ۔ ہمیں یہ پیغام دینا ہے کہ جو اس آزادی کو بھلائی کے لئیے استعمال کرتا ہے ، وہ قابل ستائش ہے اور جو اسے ہمیں تقسیم کرنے کے لئے استعمال کرتا ہے ، اس کی ہم مذمت کرتے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ اس آزادی کو جو اسلام جیسے عظیم مذہب کی بے حرمتی کے لئے بھی استعمال کرتا ہے ، ہمیںاس کی بھی مذمت مذمت کرنی چاہئیے ۔
قبل ازیں راحت چٹھہ ، امتیاز سید اور امام معاتذ شرف نے تقریب سے خطاب کے دوران سینیٹر مینینڈیز سے کہا کہ نیوجرسی میں رہنے والی پاکستانی و مسلم امریکن کمیونٹی ان کی ہمیشہ کی طرح آئندہ الیکشن میں مکمل سپورٹ کرے گی۔انہوں نے کہا کہ اسلام مخالف فلم سے امریکہ سمیت دنیا بھر میں بسنے والے مسلمانوں کے مذہبی و روحانی جذبات شدید متاثر ہوئے ہیں اور وہ سمجھتے ہیں کہ یہ آزادی اظہار کا استعمال نہیں بلکہ آزادی اظہار کے نام پر دنیا میں فساد برپا کرنے کی ایک سازش ہے ۔ شرکاءبالخصوص ڈاکٹر رفیق چوہدری نے کہا کہ ہم اسلام مخالف فلم کے بعد پرتشدد مظاہروں اور بالخصوص بن غازی میں ہمارے امریکی سفیر اور ان کے چار ساتھیوں کی ہلاکت کی بھی شدید مذمت کرتے ہیں اور سفیر اور دیگر ہلاک شدگان کے اہل خانہ سے اظہار افسوس کرتے ہی اور ان کے غم میں شریک ہیں۔امتیاز سید نے کہا کہ نیوجرسی اور جرسی سٹی میں پاکستانی امریکن کمیونٹی کی ایک بڑی تعداد بستی ہے تاہم اہم اداروں میں ان کی نمائندگی نہیں اور ہم توقع کرتے ہیں کہ ہمارے منتخب قائدین بالخصوص سینیٹر مینینڈیز اس بارے میں توجہ دیں گے ۔ تقریب سے خطاب کے دوران کمیونٹی کی جواں سال محترمہ راحت چٹھہ نے سینیٹر مینیڈیز کے سامنے کمیونٹی اور اس سے متعلقہ معاملات کی مکمل تصویر کشی کی اور ان کے خطاب کو شرکاقءکی جانب سے بہت سراہا گیا۔امام معاتذ شرف نے سینیٹر مینیڈیز کو بتایا کہ نبی کریم حضرت محمد مصطفیﷺ کی ذات مبارک مسلمانوں کے لئے کتنے احترام کا مقام رکھتی ہے اور مسلمان ان سے کتنی محبت کرتے ہیں ۔
تقریب کے آخر میں شرکاءکے اعزاز میں عشائیہ دیا گیا اور منتظمین کی جانب سے تمام شرکاءبالخصوص جنہوں نے فنڈز دئیے کا شکرئیہ ادا کیا گیا اور مسلم امریکن کمیونٹی کے نام یہ پیغام دیا گیا کہ چھ نومبر کو امریکہ میں ہونے والے الیکشن میں وہ اپنا حق رائے دہی بھرپور طریقے سے استعمال کریں اور امریکی نظام کے قومی دھارے میں شامل ہو کر اپنا کردار ادا کریں ۔


تاریخ اشاعت : 2012-10-24 00:00:00
مقبول ترین خبریں
امیگریشن خبریں
SiteLock