پاک امریکہ تعلقات کے فروغ میں ہر ممکن کردار ادا کرینگے؛پاکستانی امریکن کانگریس

 
واشنگٹن(خصوصی رپورٹ) پاکستانی امریکن کمیونٹی کی مختلف اہم تنظیموں کی نمائندہ تنظیم کے زیر اہتمام حسب روایت اس سال بھی واشنگٹن ڈی سی میں ”ایک دن کیپیٹل ہل پر “منایا گیا ۔ اس سلسلے میں امریکی دارالحکومت میں پاکستانی امریکن کانگریس (PAC) کا سالانہ اجلاس ورجینیا کے ایک ہوٹل میں منعقد ہوا۔ جس میں امریکی پاکستانی عہدیداروں کے علاوہ مختلف شعبہ زندگی سے تعلق رکھنے والے افراد نے بڑی تعداد میں شرکت کی۔
پاک امریکن تعلقات کے حوالے سے منعقدہ اس اہم تقریب کے انعقاد میں پیک کے صدر ڈاکٹر اشرف طور جنرل سیکرٹری ڈاکٹر رانا ریاض‘ ایڈ وائزری کونسل کے چیئرمین ڈاکٹر نثار چوہدری بورڈ آف ٹرسٹیز کے چیئرمین ڈاکٹر اکرم‘ پریذیڈنٹ کونسل کے صدر ڈاکٹر خالد لقمان اور دیگر ساتھیوں نے اہم کردار ادا کیا۔
 

 ڈاکٹر رانا ریاض اور ڈاکٹر نثار نے مختلف مراحل میں نے انتہائی خوبصورتی کے ساتھ نظامت کے فرائض انجام دئیے۔ ڈاکٹر اشرف طور نے خطبہ استقبالیہ پیش کیا۔
ہیر ٹیج فاﺅنڈیشن کی لیزا کرٹس‘ پاکستان ایمبیسی کے ڈپٹی چیف مشن ڈاکٹر اسد مجید‘ہفنگٹن پوسٹ کے بین باربر،سابق ڈپٹی اسسٹنٹ سیکرٹری آف دفاع برائے افغانستان ، پاکستان و سنٹرل ایشیاءڈیوڈ سڈنی‘ سٹیٹ ڈیپارٹمنٹ کے ڈائریکٹر پاکستان آفس جونا تھن پریٹ ،پالیسی آرکیٹیکٹ انٹرنیشنل کے پریذیڈنٹ روڈنی جونز، پاکستان سے خصوصی طور سے تشریف لانے والی رکن قومی اسمبلی بیگم شکیلہ چوہدری‘ ڈاکٹر اشرف طور‘ ڈاکٹر نثار چوہدری اور دیگر نے اظہار خیال کیا۔

پاکستانی امریکن کانگریس کے اس اجلاس میں اس بات پر زور دیا گیا کہ پاکستان اور امریکہ دیرینہ دوست اور ان کے باہمہ تعلقات نہ صرف باہمی طور پر بلکہ خطے اور دنیا کے لئے بھی نہایت اہمیت کے حامل ہیں ۔ ان ممالک کے تعلقات کو فروغ دینا چاہئے اور اس سلسلے میں پاکستانی امریکن کانگریس جیسی تنظیموں کا کردار نہ صرف اہم بلکہ قابل ستائش ہے ۔
اجلاس میں پاکستان اور امریکہ کی اعلیٰ سیاسی ، سفارتی اور عسکری قیادت کے روابط میں مزید فروغ پر زور دیا گیا
 
 

 
مقررین نے کہا کہ پاکستان ایک آزاد اور خود مختار ملک ہے اور اسے کسی بھی طور پر کسی بھی قسم کے انتہا پسندوں کو اپنی سرزمین کسی کو استعمال کرنے کی اازت نہیں دینی چاہئیے ۔ انہوں نے کہا کہ جنوبی ایشیاءمیں اس وقت تک استحکام پیدا نہیں ہو سکتا جب تک انڈیا پاکستان اور افغانستان کے درمیان اچھے تعلقات قائم نہیں ہو جائے۔ انہوں نے کہا کہ انڈیا کے وزیر اعظم نریندر موی کا مسئلہ یہ ہے کہ وہ کشمیر پر بات کرنے کو تیار ہی نہیں ہیں۔ جبکہ پاک بھارت تعلقات میں کشمیر ہی اہم مسئلہ ہے۔
بعض مقررین کا کہنا تھاکہ پاکستان اور امریکہ کے درمیان تعلقات میں نشیب و فراز کی بڑی وجہ یہ ہے کہ امریکہ میں ایک طبقہ ایسا بھی ہے جو سمجھتا ہے کہ پاکستان امریکی امداد حاصل کرنے کے باوجود بد ستور ڈبل گیم کر رہا ہے۔ تاہم پاکستانی قائدین کا کہنا تھا کہ پاکستان اور پاکستانی عوام نے دہشت گردی کے خلاف جنگ میں سب سے زیادہ قربانیاں دی ہیں ۔
پاکستان ایمبسی کے نائب سفیر ڈاکٹر اسد مجید نے اجلاس میں پنٹا گون رپورٹ کے حوالے سے زیر بحث آنیوالے امور پر پاکستان کا نکتہ نظر واضح کیا ۔ انہوں نے پاکستان میں ترقیاتی منصوبوں اور حکومتی کارکردگی کا بھی ذکر کیا۔

مسلم لیگ (ن) کی رکن قومی اسمبلی بیگم شکیلہ چوہدری نے پاکستان کے موجودہ حالات اور حکومت کو در پیش مشکلات کا ذکر کیا۔ انہوں نے امریکی پاکستانیوں کی خدمات کو زبردست انداز میں خراج تحسین پیش کیا۔انہوںنے کہا کہ پہلے پاکستانی امریکن کانگریس کی ایک ذمہ دار اور اب ایک پارلیمینٹرئین کی حیثیت سے میری کوشش ہے کہ دونوں ممالک کے عوام اور نمائندوں کو ایک دوسرے کے قریب لانے کی کوشش کروں۔ انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم میاں نواز شریف کی حکومت اقوام عالم کے ساتھ برابری کی بنیاد پر باوقار تعلقات کے حامل ہیں ۔حکومت خطے میں ہی نہیں بلکہ دنیا میں پائیدار امن کی ہر کوشش کو سراہتی ہے ۔

پاکستانی امریکن کانگریس کے صدر ڈاکٹر اشرف طور نے پاکستانی و امریکی اعلیٰ شخصیات کی اجلاس میں شرکت پرشکرئیہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ پیک کمیونٹی کی ایک نمائندہ تنظیم کی حیثیت سے اپنا ہر ممکن کردار ادا کرے گی۔انہوں نے کمیونٹی پر زور دیا کہ وہ زیادہ سے زیادہ تعداد میں تنظیم کا حصہ بنیں تاکہ تنظیم اپنا کردار مزید موثر اور فعال انداز میں ادا کر سکے
پاکستانی امریکن کانگریس کے جنرل سیکرٹری ڈاکٹر رانا ریاض نے پیک کے اغراض و مقاصد بیان کئے کہ کس طرح تنظیم پاک امریکہ تعلقات اور پاکستانی کمیونٹی کو مین سٹریم امریکی نظام میں شامل کرنے کیلئے بھر پور جدوجہد میں مصروف ہے۔ انہوں نے انتہائی خوبصورت انداز میں انتہائی اہم پروگرام کی نظامت کے فرائض انجام دئیے ۔
چئیرم بورڈ آف ٹرسٹیز ڈاکٹر اکرم نے پاکستانی امریکن کانگریس کو کامیاب سالانہ اجلاس کے انعقاد پر مبارکباد دی۔

اجلاس کے انعقاد میں شہزاد چوہدری ، اسد چوہدری ، ڈاکٹر حفیظ جاوید سمیت دیگر کی خدمات کو سراہا گیا ۔اجلاس میں کانگریس کے مینی عالم شاہد کامریڈ کی صحت یابی کے لئے دعا کی گئی۔
 پاکستانی امریکن کانگریس کے سالانہ اجلاس کے اگلے روز امریکہ میں پاکستان کے سفیر جلیل عباس جیلانی نے پیک کے اراکین کے اعزاز میں استقبالیہ دیا۔
 

پاکستان ایمبسی میں دئیے گئے استقبالیہ کے دوران سفیر پاکستان نے پاک امریکہ تعلقات کے سلسلے میں پیک کی کارکردگی کو شاندار الفاظ میں سراہا ۔

تاریخ اشاعت : 2014-12-03 00:00:00
مقبول ترین خبریں
امیگریشن خبریں
SiteLock