وزیر اعظم کے جنرل اسمبلی سے خطاب کے موقع پر ایم کیو ایم امریکہ کا اقوام متحدہ کے سامنے احتجاجی مظاہرہ

 

نیویارک (پ ر ) وزیر اعظم اسلامی جمہوریہ پاکستان محمد نواز شریف کی اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب کے موقع پرایم کیو ایم امریکہ کی جانب سے اقوام متحدہ کے سامنے احتجاجی مظاہرہ کیا گیا۔ ایم کیو ایم امریکہ کی جانب سے جاری کردہ پریس ریلیز میں کہا گیا کہ یہ احتجاجی مظاہرہ کراچی میں مہاجروں کے خلاف کراچی میں جاری آپریشن، انسانی حقوق کی بد ترین خلاف ورزیوں ، لاقانونیت ، سیاسی و فلاحی سرگرمیوں پر غیر اعلانیہ پابندی، ریاستی اداروں کی جانب سے مہاجر کارکنان کے اغوا و جبری گمشدگیوں انکے ماورائے عدالت و آئین قتال اور ایم کیو ایم کے راہ نما الطاف حسین کے بیانات و خطابات پر پابندی کے خلاف کیا گیا


پریس ریلیز میں مزید کہا گیا کہ مظاہرے میں ایم کیو ایم امریکہ کے سینٹرل ٓرگنائزر جنید فہمی، جوائنٹ سینٹرل آرگنائزر محمد ارشد حسین ،اراکین سینٹرل آرگنائزنگ کمیٹی سابق رکن صوبائی اسمبلی سندھ عارف صدیقی ، سابق رکن صوبائی اسمبلی سندھ وکیل احمد جمالی، سابق ڈپٹی مئیر کراچی متین یوسف، گل محمد، اسد صدیقی، شمیم صدیقی، عامر قاضی، توصیف خان، ثاقب محی الدین، آنسہ نسیم السحر، وسیم زیدی، کامران حیدر، علی حسن ، کمیونیکیشن اینڈ میڈیا سیل کے انچارج عمران حسین، نیویارک چیپٹر کے انچارج اسامہ حسن ، ایم کیو ایم امریکہ خواتین ونگ، یوتھ ونگ ،امریکہ بھر میں موجود بیس سے زائد چیپٹرز کے کارکنان و ذمہ داران سمیت امریکہ میں مقیم پاکستانیوں کی بہت بڑی تعداد نے شرکت کی۔


 سخت موسم اور بارش کے باوجود مظاہرین کی بہت بڑی تعداد نے کراچی میں امن و امان کے قیام، جرائم پیشہ عناصر کے خاتمہ کے نام پر شروع کئے جانے والے آپریشن کو یکطرفہ طور پر مہاجر قوم اور انکی واحد نمائندہ جماعت پر مسلط کرکے اسکی سیاسی و فلاحی سرگرمیوں پر پابندی عائد کرنے ایم کیو ایم اور مہاجر قوم کو دیوار سے لگانے ، کراچی پر طالبانی قوتوں کے قبضہ کی سازش کی بھرپور مذمت کرتے ہوئے اپنا بھرپور احتجاج ریکارڈ کروایا۔


 مظاہرے کے شرکاءنے اپنے ہاتھوں میں پاکستان اور ایم کیو ایم کے پرچم اٹھا رکھے تھے اور وہ مسلسل مہاجر کارکنان پر بدترین ریاستی مظالم، غیر قانونی گرفتاریوں، جبری گمشدگیوں، انسانیت سوز تشدد اور ماورائے عدالت قتال ، نواز شریف حکومت کی مہاجر دشمن پالیسیوں اور ریاستی اداروں کے متعصبانہ کردار کے خلاف شدید نعرے بازی کر رہے تھے۔مظاہرین نے ہاتھوں میں لاپتہ کارکنان اور تشدد زدہ مہاجرشہداءکے تصویری پلے کارڈ ذ اٹھا رکھے تھے جبکہ بعض شرکاءنے بینرز تھام رکھے تھے جن پر جبری طور پر لاپتہ کئے گئے کارکنان کی بازیابی، ریاستی اداروں کی حراست اور بہیمانہ تشدد سے شہید ہونے والے کارکنان کے اہل خانہ کو انصاف دلانے، ایم کیو ایم کی فلاحی اور سیاسی سرگرمیوں پر غیر اعلانیہ پابندیوں، قائد تحریک الطاف حسین کے بیانات اور تقاریر پرغیرآئینی پابندیوں کے خلاف نعرے درج تھے۔

 

مظاہرین سے خطاب کرتے ہوئے ایم کیو ایم امریکہ کے جوائنٹ سینٹرل آرگنائزر محمد ارشدحسین نے کہا کہ مہاجر دشمن حکومت نے ماضی میں بھی مہاجر قوم کو تقسیم کرنے اور انکی نمائندہ جماعت کو بزور طاقت ختم کرنے کی سازش رچی تھی اور ۲۹۹۱ میں فوجی آپریشن کے ذریعے مہاجر کارکنان پرانسانیت سوز تشد اور ماورائے عدالت قتال سمیت ایم کیو ایم کو دبانے، جھکانے اور دیوار سے لگانے کیلئے ہر اوچھا ہتھکنڈہ اختیار کیا تھا لیکن اس کے باوجود نہ ایم کیو ایم کو ختم کیا جاسکا اور نہ ہی مہاجر کارکنان اور قوم کے دلوں سے قائد تحریک الطاف حسین کی محبت کو نکالا جاسکا۔ انھوں نے کہا کہ ہم بانیان پاکستان کی اولادیں ہیں ہم سے زیادہ اس وطن کا درد کسی سینے میں نہیں ہو سکتا۔ ایم کیو ایم اور الطاف حسین صرف پاکستان کی بقا اور استحکام چاہتے ہیں اور اس ہی کے لئے جدوجہد کر رہے ہیں۔انھوں نے کہا کہ اگر کوئی ایم کیو ایم اور الطاف حسین کو پاکستانی اورمحب وطن نہیں سمجھتا تو پھر اس دھرتی پر کوئی بھی محب وطن پاکستانی نہیں ہے۔یہ وطن ہمارے اجداد کی انتھک محنت اور بے لوث قربانیوں کا نتیجہ ہے مہاجر قوم اب کسی کو بھی اس کے ساتھ مزید کھلواڑکی اجازت نہیں دے گی۔ جو ہماری نرم خوہی کو ہماری کمزوری سمجھ رہے ہیں انہیں چاہئے کہ اپنا قبلہ درست کرلیں اینٹ کا جواب ہمیشہ مسکراہٹ نہیں بلکہ پتھر سے بھی دیا جا سکتا ہے۔


پریس ریلیز کے مطابق ایم کیو ایم امریکہ کے سینٹرل آرگنائزر جنید فہمی نے مظاہرے کے شرکاءسے اپنے خطاب میں کہا کہ نواز شریف وزیر اعظم پاکستان ہیں اور اقوام متحدہ میں پاکستان کا مقدمہ رکھنے اور دہشت گردی کی جنگ میں ریاست پاکستان کے کردار اور پاکستان کا خوبصورت و روشن چہرہ پیش کرنے آئے ہیں۔مگر انکی جمہوری حکومت نے محب وطن مہاجرقوم اورانکی نمائندہ جماعت کے ساتھ جومتعصبانہ اور آمرانہ سلوک روا رکھا ہے وہ پاکستان میں انکی جمہوری حکومت کا بھیانک ، مکروہ اور سیاہ چہرہ پیش کرتی ہے۔


 عالمی دہشت گردی کے خلاف فرنٹ لائن ریاست کا کردار ادا کرنے کے دعویدار مقتدر قوتوں کے ہاتھوں جو ریاستی دہشت گردی پاکستان میں مہاجر قوم کے ساتھ کی جارہی ہے اس نے پاکستان کے انسان دوست، روشن چہرے پر سیاہ کالک مل دی ہے۔ ظلم و ستم، لاقانونیت اور ماورائے عدالت و آئین قتال اور مہاجر قوم کی نسل کُشی پر پاکستان میں انصاف و قانون اور انسانی حقوق کے تمام اداروں کی خاموشی بلکہ جانبداری انکی بے حمیتی،بے حسی اور نادیدہ بے بسی کا منہ بولتا ثبوت ہے یہی وجہ ہے کہ پاکستان میں انصاف و قانون اور انسانی حقوق کی مالا جپنے والے اداروں کا دروازہ متعدد بار کھٹکانے اور کوئی شنوائی نہ ہونے پر مجبور ہوکر ہم نے بانیان پاکستان کی اولادوں، مظلوم مہاجر قوم کا مقدمہ اقوام متحدہ کے مرکزی دفترکے سامنے اپنے احتجاج کی صورت میںپیش کیا ہے۔


مظاہرین سے خطاب کرتے ہوئے انھوں نے کہا کہ یہ کیسی اسلامی ریاست ہے جہاں خود ساختہ اسلام کے نام پر بے گناہوں کے گلے کاٹنے والے، انکے حمایتی اور سہولت کاروں کو ہر آزادی و سر پرستی حاصل ہے ، یہ کیسی جمہوریہ ہے جہاںجمہور کی ٓواز ہی پابند ہے۔ یہ کیسا پاکستان ہے جہان اسکے تحفظ کی قسم کھانے والے ہی اسکی سلامتی کے درپے اور تحفط کے دشمن ہیں پھر بھی نیک نام اور مقتدر ٹھہرے ہیں۔


 انھوں نے مزید کہا کہ پاکستان کے لئے اپنی جان و مال سب کچھ لٹا کر ہجرت کرنے والے بانیان پاکستان کی اولادوں کو گزشتہ ۷۶سالوں میں خود کو پاکستان کا مخلص اور بزعم خود فرزند زمیں کہلوانے والوں سے نفرت اور امتیازی سلوک کے سوا کچھ نہیں ملا۔تنگ ذہنی اور تعصب کا یہ عالم ہے کہ اپنی ہی شناخت سے محروم زبانیں مہاجر قوم کو مکھی مچھروں، کالے کلوٹوں اور زمین کھرچنے والے جانوروں جیسے غلیظ ناموں سے پکارتے ہیں۔ معاشرے کی ہر سطح پر ان سے تعصب برتا اور امتیازی سلوک روا رکھا جاتا ہے۔ ملک کی کل آمدنی کا ۰۷ فیصد مہیا کرنے والوں کو حکومت کا تو درکنار منتظم کا بھی حق حاصل نہیں پورے ملک کو پالنے اور جبری مقتدروں کے پر ہوس پیٹوں کو بھرنے والے شہر اور شہریوں کی اکثریت کو پانی اور صحت کی بنیادی سہولیات تک میسر نہیں۔


پریس ریلیز کے مطابق مظاہرے کے موقع پر ایم کیو ایم امریکہ کی جانب سے اقوام متحدہ میں حکومت پاکستان ریاستی اداروں کی جانب سے کی جانے والی زیادتیوں اور انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں اور اسکے شواہد پر مبنی ایک پٹیشن بھی جمع کرائی گئی


 قبل ازیں نیو یارک میں سخت موسم اور بارش کے باوجود احتجاجی مظاہرے میں امریکہ بھر سے آئے کارکنوں اور نیویارک اور قریبی ریاستوں میں مقیم پاکستانیوں کی بہت بڑی تعداد نے شرکت کی۔ شرکاءکی جانب سے نواز شریف ، متعصب رینجرز کے کارکنوں پر تشدد ، ماورائے عدالت قتل اور الطاف حسین کے بیانات اور خطابات پر پابندی کے خلاف اور الطاف حسین ، ایم کیو ایم اور شہری صوبہ کے حق میں سمیت پاکستان زندہ باد کے مسلسل اور فلک شگاف نعرے لگائے جاتے رہے۔



تاریخ اشاعت : 2015-10-07 00:00:00
مقبول ترین خبریں
امیگریشن خبریں
SiteLock