وزیر اعظم کی زیر صدارت مشترکہ مفادات کونسل کے اجلاس میں مردم شماری کے عبوری نتائج کی بنیا د پر انتخابات کرانے پر اتفاق ہوگیا

 

وزیر اعظم کی زیر صدارت مشترکہ مفادات کونسل کے اجلاس میں مردم شماری کے عبوری نتائج کی بنیا د پر انتخابات کرانے پر اتفاق ہوگیاجبکہ کونسل نے مزید سیٹیں نہ بڑھانے کی تجویز بھی دی۔ مشترکہ مفادات کونسل نے مردم و خانہ شماری کے نتائج کو پرکھنے کے لیے ایک فیصد بلاکس کا آڈٹ کرانے کی منظوری بھی دے دی۔

 

وزیر اعظم کی زیر صدارت مشترکہ مفادات کونسل کے اجلاس کے بعد میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے وزیر اعظم کے معاون خصوصی مصدق ملک نے کہا کہ انتخابات وقت پر عبوری نتائج کی بنیاد پر کرانے پر اتفاق ہو گیا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ سیاسی رہنمائوں نے سمجھداری سے بڑے آئینی بحران کو حل کر لیا ہے، آئینی ترمیم کے بعد الیکشن کمیشن فوری حلقہ بندیوں پر کام شروع کردےگا۔ ایک سوال کے جواب میں ان کا کہنا تھا کہ اجلاس میں کراچی کی آبادی سے متعلق ابہام دور کردئیے گئے ہیں۔

 

قبل ازیں وزیر اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے کہا ہے کہ پیپلز پارٹی جمہوری جماعت ہے الیکشن میں کسی صورت تاخیر نہیں ہونے دے گی۔ ان کا کہنا تھا کہ مردم شماری سے متعلق معاملات وفاقی حکومت کی نااہلی کی وجہ سے پیدا ہوئے تاہم ان نتائج کو کچھ شرائط کے ساتھ قبول کریں گے۔ اسلام آباد میں وزیر اعظم کی زیر صدارت مشترکہ مفادات کونسل کے اجلاس میں اپنا موقف دیتے ہوئے وزیر اعلیٰ سندھ نے کہا کہ مردم شماری کے نتائج کو کچھ شرائط پر قبول کریں گےتاہم سینسز بلاک کے ایک فیصد کی تھرڈ پارٹی سے تصدیق کرائی جائےاور مردم شماری سے متعلق عوام کے خدشات دور کئے جائیں۔

تاریخ اشاعت : 2017-11-12 00:00:00
مقبول ترین خبریں
امیگریشن خبریں
SiteLock